Wikipedia:مضمون جو عنوان

کليل ڄاڻ انسائيڪلوپيڊيا، وڪيپيڊيا مان
ڏانھن ٽپ ڏيو: رھنمائي, ڳولا

مضمون جو عنوان ھن مضمون تي موجود پهرئين وڏي سُرخي هوندي آهي۔ هن مخصوص مضمون ۾ ڪوشش ڪئي وئي آهي ته عنوانن سان لاڳاپيل وڪيپيڊيا ڪي ٻين اصولن کي ٺيڪ طور سان ۽ آسان زبان ۾ يوزرز (صارفين) کي سمجهائي سگهجي ۔ وڪيپڊيا تي موجود مضمونن جا عنوان اڪثر ڪنهن هڪ موضوع جو نالو يا ان موضوع جي وضاحت ڪندڙ هڪ فقرو هوندو آهي ۔ اڪثر هڪ کان وڌيڪ موضوع جو هڪ ئي نالو يا عنوان ٿي سهگي ٿو؛ تنهنڪري هِن هڪ عنوان کي بنياد بڻائي ڪري اِنهن موضوعن جي تفريق (فرق) ۾ ڏُکيائي پيش ايندي آهي۔ ائين ٿيڻ جي صورت ۾ اِنهن موضوعن جي عنوانن سان گڏ قوسين (parentheses يا brackets) ۾ وضاحتي عبارت پڻ ڏئي سگهجي ٿي۔ عام طور تي، عنوان کي هيئن هجڻ گُهرجي، تج جيئن ان سان نہ صرف مضمون جي مواد جو اندازو لڳائي سگهجي، بلڪہ اِن جي مدد سان اُن موضوع سان گڏ مشابهت به پيدا ٿي سگهي۔ عنوان جو تعين هي مدِنظر رکي ڪري ڪيو ويندو آهي ته هي عنوان جنهن موضوع جي نمائندگي ڪري رهيو آهي، اُن کي ٻين قابلِ اعتماد ذرائع ۾ ڪيئن ڄاتو ويندو آهي۔


عنوان ڇا رکون؟[سنواريو]

هڪ سُٺي عنوان ۾ مندرجہ ذيل يا هيٺ ڏنل خصوصيتون هئڻ ُهرجن:

  • قابل شناخت عنوان کي پڙهي ڪري مضمون جي موضوع کي واضح ٿي وڃڻ گُهرجي۔
  • قابل رسائي عنوان اهڙو هجڻ گُهرجي، جنهن تائين آسانيءَ سان پُهچي سگهجي، خواہ وڪيپيڊيا تي تلاش جي ذريعي يا انٽرنيٽ جي ٻين سرچ انجڻ تي تلاش جي ذريعي۔
  • درست ۽ واضح عنوان درست ۽ واضح هُجڻ گُهرجي، مُبهم (ڳُجهو) ۽ هم نالو موضوعن ۽ مضمونن ۾ فرق ڪري سگهجي۔
  • مختصر عنوان ننڍو ۽ مختصر هُئڻ گُهرجي؛ گهڻو ڊگهو يا طويل عنوان نہ رکيا وڃن۔
  • دیگر عناوین سے مطابقت وڪيپيڊيا تي موجود ٻين عنوانن کي نمونو بڻائي ڪري ۽ اُنهن جي طِرز تي توهان جو عنوان پڻ هئڻ گھُرجي۔

اِنهن خصوصيتن تي مُبني عنوان رکندي اِن ڳالهه جو خيال رکو ته هي لازم ناهي ته اِن ئي پنجن نُقطن کي مدِنظر رکيو وڃي۔ هي نقطا محض رهنما نقاط آهن ته جيئن انهن تي غور ڪري هڪ تسلي بخش عنوان رکي سگهجي۔ ڪڏنهن عنوان رکڻ تمام آسان هوندو آهي، پر بعض وقت ائين پڻ ٿيندو آهي ته هي فيصلو خوب واضح ناهي هوندو۔ تنهن باوجودآپ ایک نُقطے کو دوسرے پر ترجیح دے سکتے ہیں۔ البتہ چڱو هي آهي ته هي عمل راءِ شماري سان ڪيو وڃي۔ اِن جي هڪ مثال پاڪستان پر لکھا گیا مضمون آهي۔ درستگي جي اعتبار کان ته اِن مضمون جو عنوان اسلامي جمهوریۂ پاڪستان هُئڻ گُهرجي، پر جيئن ته محض پاڪستان جو لفظ ئي هڪ مختصر ۽ قابلِ شناخت عنوان آهي، تنهنڪري هِتي اُهو ئي استعمال ۾ آيو آهي۔

عنوان ۾ القاب[سنواريو]

  • ڪنهن به مضمون يا صفحي جي عنوان ۾ شخصيتن جو اصل نالو بغير ڪنهن لقب، اعزاز يا دعائي ڪلمي جي لکيو وڃي۔
  • عنوان ۾ بقيد حيات شخصيتن جي نالي سان گڏ لقب يا دعائيہ ڪلمات قطعاً نہ لکيا وڃن۔
  • انبیاء، صحابہ ۽ ٻين مذهبن جي بنيادي اهم مذهبي شخصيتون سان گڏسڀ کان معروف پر مختصر لقب لڳائي سگهجي ٿو۔
  • لقب، اعزاز يا دعائیہ ڪلمات جي نالي سان صفحا بڻائي ڪري انهن کي اصل مضمون جي طرف رجوع مڪرر (ريڊائريڪٽ) ڪري سگهجي ٿو، ته جيئن انهن ڪلمات سان تلاش ڪرڻ وارن کي آساني ٿئي۔
  • اگر ڪنهن معروف شخصيت جي نالي ۾ ڪنهن شهر/مسڪن/مقام وغيرہ لڳايو ويو هُجي ۽اها شخصيت اُنهيءَحوالي سان گهڻي معروف هجي ته عنوان ۾ اُن انتساب کي درج ڪرڻ جي گنجائش آهي، جسے عسقلانی، دہلوی، امرتسری وغیرہ۔
  • متعلقہ فرد یا شخصیت کا پیشہ عنوان میں درج نہ کیا جائے، مثلاً مفتی، ڈاکٹر، پروفیسر وغیرہ۔
  • اگر کسی دو شخصیات کے نام ، القاب یا دعائیہ کلمات ایک جیسے ہوں تو ان شخصیات کے مضامین اصل نام اور وجہ تسمیہ سے بنائے جائیں اور عمومی نام، القاب یا دعائیہ کلمات والے ناموں کے ضد ابهام (سُلجهائپ) صفحا بنائے جائیں۔
  • جملہ مذاہب کے افراد/صارفین کو اس بات کی اجازت ہے کہ وہ عناوین میں اپنی محترم شخصیات کے ساتھ القاب/دعائیہ کلمات لگا کر اسے اصل مضمون سے رجوع مڪرر کر سکتے ہیں، البتہ اس بات کا خیال رکھیں کہ ایسے رجوع مکرر صفحات دو سے زائد نہ ہوں۔
  • عنوان میں نام کے ہر کلمہ کے بعد خالی جگہ چھوڑی جائے، تاہم بغیر خالی جگہ والے ناموں سے رجوع مکررکا صفحہ بنایا جا سکتا ہے، مثلا عبد اللہ کو عبداللہ (بغیر سپیس) نہیں لکھا جا سکتا، البتہ عبداللہ سے رجوع مکرر صفحہ بنایا جا سکتا ہے۔
  • اس سلسلہ میں کسی قسم کے تنازع کی صورت میں منتظمين کی کثرت رائے حرف آخر اور فیصلہ کن سمجھی جائے گی۔

عام استعمال ۾ ايندڙ اسم خاص[سنواريو]

کسی بھی شخص، چیز یا جگہ کے نام کو اسم خاص کہتے ہیں۔ چنانچہ اِن سب پر مبنی مضامین کا عنوان بھی یقیناً کسی اسم خاص کی طرف اشارہ کرتا ہے۔ مگر ضروری نہیں کہ کوئی شخص، چیز یا جگہ اپنے درست اسم خاص سے معروف ہو۔ انگریزی زبان میں ولیم نامی اشخاص کی عرفيت اکثر بل ہوتی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ لوگ اکثر بل ڪلنٽن کو ولیم کلینٹن اور بل گيٽس کو ولیم گیٹس پر ترجیح دیتے ہیں۔ لہٰذا، جب کسی شخص، چیز یا جگہ کے نام پر مبنی مضامین تحریر کیے جایئں تو یہ خیال رکھیں کہ ایسے عنوان کا تعین کیا جائے جو کہ عام طور پر استعمال ہونے والے اسم خاص کی عکاسی کرے۔

ناملن جي نقل نويسي ڪٿي بهتر آهي؟[سنواريو]

اُردُو کے علاوہ دیگر اور زبانوں میں لکھے گئے ادب یا اِن زبانوں میں بنائی گئی فلمیں اور فنون کے ناموں کا ہرگز اردو زبان میں ترجمہ نہ کریں، مثلاً دي لارڊ آف دي رنگز اور بليڪ هاڪ ڊائون۔ تاہم، جیسا کہ ان مثالوں سے صاف ظاہر ہے، آپ کو چاہیے کہ ان ناموں کو محض نقل نويسي کر کہ ایسے مضامین کے عناوین متعین کر لیں۔ نقل نویسی کی شرائط مندرجہ ذیل اشیاء پر لاگو ہوتی ہیں:

  • اُردُو کے علاوہ کسی اور زبان میں کتب، فلموں یا فنون کے نام؛ مثلاً، دي لارڊ آف دي رنگز کو انگوٹھیوں کا سردار نہ بنا دیا جائے۔
  • کیمیائی، سائنسی، تکنیکی اور عام استعمال ہونے والی چیزوں کے نام؛ مثلاً، هائيڊروجن کا ترجمہ کرنے بیٹھ جانا محض بیوقوفی ہوگی اور نہ ہی آئي پيڊ کا کوئی نعم البدل ہے۔
  • ڪنهن به شخص جي نالي جو ترجمو نہ ڪريو۔ البتہ اگر ڪنهن فرد جو سنڌي نالو معروف هوجي ته اُن نالي کي ضرور استعمال ڪريو۔ مثلاً، ارسٽوتل جي جڳهہ تي ارسطو استعمال ڪريو۔

ٻيون عمومي هدايتون[سنواريو]

  • تلفظ اور املا کی بنیاد پرشہروں اور مقامات کے مضامین کے نام بھی منتقل کیے جاتے ہیں۔ اس سلسلہ میں جو املا سنڌي میں کثرت سے رائج ہو وہ مانا جائے۔
  • شہروں کے نام، شخصیات کے نام وغیرہ میں املا اور تلفظ کو اہمیت حاصل نہیں ہوتی۔ بلکہ جو املا سرکاری طور پر یا علاقائی طور پر تحریری مستعمل ہوں، وہ مانا جاتا ہے، جیسے اگر کوئی شخص اپنا نام ھ سے لکھتا ہے تو اسے ہ سے نہیں لکھ سکتے۔
  • یورپی یا دیگر علاقوں کی زبانوں میں جو جو الفاظ اردو میں رائج ہوں (خواہ انگریزی سے آ رہے ہوں) ان کو درست مانا جائے گا، مثلاً فرانس کے شہر پيرس کو فرانسیسی تلفظ کی بنا پر پاغی نہیں لکھا گیا، بلکہ معروف انگریزی تلفظ پیرس ہی درج کیا گیا ہے۔ البتہ جو اسمائے معروفہ فرانسیسی، جرمنی، وغیرہ زبانوں کے اردو میں عام نہیں نا ہی ان کا انگریزی تلفظ اردو زبان میں معروف ہو تو ان ناموں کو اصل زبان کے تلفظ کی بنیاد پر لکھا جائے گا۔
  • دوسری زبانوں کی کتب جن کا اردو میں ترجمہ کیا گيا ہے، ان کے عنوان کو اردو ترجمہ کے مطابق لکھا جائے، اگر ایک سے زائد تراجم ہیں تو اصل زبان کے عنوان سے قریب تر مفہوم رکھنے والے عنوان کو لیں اور بقیہ عناوین سے رجوع مکرر کیا جائے۔
  • فلموں، ڈراموں وغیرہ کے ناموں کو اردو میں لکھنے کی قطعا کوئی وجہ نہیں، فارسی یا عربی والے اگر ایسا کرتے ہیں تو اس کی وجہ ان زبانوں میں فلموں کی باقاعدہ اجازت کے ساتھ ڈبنگ اور عنوان کا علاقائی زبان میں درج کرنا بھی شامل ہے۔
  • اداروں اور تنظیموں کے نام اگر تنظیمی طور پر وہ خود اردو میں کوئی استعمال کرتے ہیں تو اسے مانا جائے۔ بقیہ ناموں میں سے جن کو دیگر اردو تحریروں میں ترجمہ کیا جا رہا ہو تو ان کو ترجمہ کیا جائے، نا کہ ہر نام کو۔ جیسے اقوام متحدہ کے ذیلی اداروں کے نام اردو میں ترجمہ شدہ ہیں۔ جب کہ نیشنل جیوگرافک کا سنڌيءَ میں کوئی نام متداول نہیں۔
  • اصطلاحات، محاورات، الفاظ پر الگ الگ حکم لگے گا۔ اس لیے انھیں منتقل کرنے سے پہلے تبادلۂ خیال کرنا بہتر ہے۔